خون کا سرطان قابل علاج ہے

 

طب مشرق کی بدولت جاں بلب مریضوں کو حیات نو ملنے کے حیرت انگیز واقعات

 

 

۱۹۸۶ء کی بات ہے۔ ستمبر کا مہینہ تھا۔ میں اپنے مطب میں بیٹھا ہوا تھا کہ فریڈرک شمشاد آگئے۔ ان کے ہاتھ میں ایک مٹرا تڑا اخبار تھا۔ کہنے لگے ’’یہ ۱۴ اگست کا پاکستان ٹائمز ہے جس میں چھپا ہو ایک خط آپ کے مطلب کا ہے۔‘‘ میں نے خط پڑھا تو اس کا مفہو م یہ تھا:

ہماری نوجوان بچی کو خون کا سرطان ہو گیا۔ ملک کے مختلف بڑے بڑے ہسپتالوں میں علاج کروایا مگر مرض بڑھتا گیا جوں جوں دوا کی۔ حتیٰ کہ میو ہسپتال لاہور والوں نے کہا کہ اب بچی کا بچنا مشکل ہے لہٰذا اسے اپنے گھر لے جائیں۔ ہم ہسپتال والوں کی ہدایت کے مطابق اسے منڈی بہاؤ الدین لے آئے اور وہاں کے ہسپتال داخل کر دیا کہ جب تک سانس باقی ہے‘ بچی طبی سہولتوں سے فیضیاب ہوتی رہے۔

علاج جاری تھا لیکن بچنے کی امید نہیں تھی۔ ہم خود بھی مایوس تھے۔ ایک دن ہسپتال میں ہمارے جاننے والے صاحب ملنے آئے جو جاتے ہوئے کہہ گئے کہ اس علاقہ میں ’سچی بوٹی‘ ملتی ہے۔ اگر آپ صبح شام تھوڑی سی بوٹی لے کر اسے پانی میں گھوٹ کر پلائیں تو امید ہے اللہ پاک فضل کرے گا۔ ہم روزانہ بوٹی توڑتے‘ چار پانچ پتے پانی میں گھوٹتے اور مریضہ کو پلا دیتے۔ یوں پندرہ دن گزرگئے۔ ایک دن میں مریضہ کے پاس بیٹھا ہوا تھا کہ اتفاقاً تین چار ڈاکٹر وہاں آگئے اور میری موجودگی میں گفتگو کرنے لگے۔ موضوع بحث ہماری مریضہ تھی اور گفتگو کی زبان انگریزی تھی۔ میری وضع قطع سے یہ سمجھ کر کہ میں انگریزی نہیں جانتا‘ وہ اس زبان کو سہارا بنائے باتیں کرنے لگے اورمیں غور سے ان کی باتیں سننے لگا۔ ایک ڈاکٹر کہنے لگا ’’ مریضہ کی طبیعت بہتر ہو رہی ہے۔ خون کے سرخ ذرات میں بھی اضافہ ہوا ہے۔ میرا خیال ہے یہ فلاں دوا کا اثر ہے۔‘‘

دوسرا ڈاکٹر بولا ’’یہ دوا تو ہم نے فلاں فلاں مریض کو بھی دی ہے لیکن اسے ذرہ برابر فائدہ نہیں ہوا۔ میرا خیال ہے کہ یہ فلاں دوا سے بہتر ہوئی ہے۔‘‘

اب مجھ سے نہ رہا گیا‘ میں نے ان کی بات کاٹ کر کہا ’’ڈاکٹر صاحبان! آپ کی بتلائی ہوئی ادویات ہم نے یہاں بھی اور دوسرے ہسپتال میں بھی استعمال کیں مگر فائدہ نہیں ہوا۔ اب ہم مریضہ کو سچی بوٹی استعمال کر وارہے ہیں اور یہ اسی کا اثر ہے۔‘‘

پہلے تو ڈاکٹروں نے انکار کیا مگر میرے اصرار پر انہوں نے اجازت دے دی کہ سچی بوٹی مریضہ کو  استعمال کرواتا  رہوں۔ کئی دن تک یہ دوا استعمال کرائی گئی اور وہ مریضہ جس کی زندگی سے ہم مایوس ہو چکے تھے‘ صحت یاب ہو کر گھر آگئی۔

خط لکھنے والے صاحب نے ڈاکٹروں اور اطباء سے یہ درخواست کی تھی کہ وہ اس گراں قدر بوٹی پر تحقیق کریں اور اگر مفید ثابت ہو تو اسے دنیا میں متعارف کرائیں۔ میں نے فریڈرک شمشاد کا شکر یہ ادا کیا کہ انہوں نے میرے لیے تحقیق کا ایک نیا دریچہ کھولا۔ وہ ایک محب وطن پاکستانی استاد ہیں۔ عرصہ دراز سے مریض کی حیثیت سے میرے پاس آتے ہیں۔ پرانا مریض چونکہ آدھا طبیب ہو جاتا ہے‘ اس لیے حکمت سے بھی شغف رکھتے ہیں اور سچی بوٹی کے بارے میں خط پڑھ کر میرے پاس آگئے۔

لیکن میں سچی بوٹی کے نام سے بھی واقف نہ تھا۔ کئی مقامی اطباء سے پوچھا‘ وہ بھی اس نام سے واقف نہیں تھے۔ مفردات کی جو جو کتاب مجھے دستیاب ہو سکی‘ کھنگال ڈالی لیکن کسی کتاب میں سچی بوٹی کے بارے میں ایک لفظ بھی نہ ملا۔ ذہن میں خیال آیا کہ ہو سکتا ہے یہ کوئی مقامی نام ہو لہٰذا اس بوٹی کا پتا کرنے کے لیے منڈی بہاؤ الدین سے رابطہ قائم کیا جائے۔ وہاں یونیورسٹی کے زمانہ طالب علمی کے ایک میرے ساتھی محمد یونس رہتے تھے۔ میں نے انہیں خط لکھا اور وہاں جاپہنچا۔

وہ خود تو اس بوٹی سے بلکہ طب سے بھی واقف نہیں تھے لیکن وہاں کے ایک معروف طبیب حکیم افتخار فخر کے پاس مجھے لے گئے۔ میں نے حکیم صاحب سے اس خط کا ذکر کیا اور ان سے بوٹی کے معاملے میں مدد چاہی۔ فرمانے لگے ’’اس بوٹی سے میں اچھی طرح واقف ہوں۔ ہمارے علاقے میں دھمانسہ کو سچی بوٹی کہا جاتا ہے۔‘‘

دھمانسہ پنجاب کے میدانی علاقوں‘ خصوصًا دریاؤں کے کنارے ریتلی زمین میں پیدا ہوتی ہے۔ یہ زمین پربچھی ہوئی کانٹے دار بوٹی ہے۔ اس کا پتہ بہت چھوٹا ہوتا ہے اور کانٹوں کے سرے پر پھول لگتے ہیں۔ پنچابی میں اسے دھماں بوٹی کہتے ہیں۔ اس کی مقدار خوراک ۲ سے ۵ گرام ہے۔ مفردات پر شائع ہونے والی کتب میں اسے مقوی معدہ وجگر‘ دافع بخار اور مصفی خون لکھا ہے۔ اس کے پتے لیموں کے عرق میں ملا کر لگانے سے بال سیاہ ہو جاتے ہیں۔

میں نے اردو‘ عربی اور انگریزی میں شائع ہونے والی کتب میں اس کے خواص پر نظر ڈالی‘ سب نے اسے مصفی خون تو لکھا ہے لیکن خون کے سرطان کے لیے مفید ہونے کا کہیں ذکر نہیں۔ ہو سکتا ہے پہلے کسی نے اسے اس مرض میں استعمال ہی نہ کیا ہویا صاحب تصنیف لوگوں کے تجربے میں نہ آئی ہو اور عام آدمی اس سے مستفیض ہوتے ہوں۔ پاکستان ٹائمز کے خط میں اس بات کا ذکر کہ ایک عام آدمی نے انہیں خون کا سرطان دور کرنے کے لیے اس کے استعمال کا مشورہ دیا‘ ظاہر کرتا ہے کہ صاحب نسخہ نے پہلے بھی اسے استعمال کیا ہوگا۔

۱۹۹۴ء میں مجھے یہ نسخہ آزمانے کا موقعہ ملا۔ فیصل آباد سے ڈاکٹر سبطین کاظمی کا خط آیا کہ ایک مریضہ کے بارے میں مشورہ کرنے کے لیے وہ حاضر ہونا چاہتے ہیں۔ مقررہ تاریخ کو وہ تشریف لائے۔ رسمی علیک سلیک کے بعد انہوں نے ذکر کیا ’’میرے پاس حیدر آباد سے ایک خط آیا ہے۔ چونکہ خط سندھی زبان میں ہے اس لیے اس کا ترجمہ آپ کو سنانا چاہتا ہوں۔‘‘

خط میں لکھا تھا کہ ایک مریضہ جس کی عمر چھبیس ستائیس سال ہے‘ خون کے سرطان میں مبتلا جا مشورو  ہسپتال میں داخل ہے۔ اس کے خون کے سرخ ذرات کم سے کم ہو رہے ہیں۔ ڈاکٹروں نے کہا ہے کہ انہیں لاہور لے جائیں۔ کیا آپ کو کسی ایسے ڈاکٹر کا علم ہے جو بلڈ کینسر کا علاج کر سکے؟ ۔ میں نے ڈاکٹر صاحب سے پاکستان ٹائمزوالے خط کا ذکر کیا۔ انہوں نے اطمینان کا اظہار کیا اور کہا ’’مجھے آپ دوا دے دیں۔ میں انہیں بھجوا دیتا ہوں۔‘‘

میں نے انہیں پندرہ دن کی دوادی اور کہا کہ آپ مجھے وقت گزرنے پر فوراً اطلاع کریں۔ جب مقررہ روز گزرگئے تو ڈاکٹر صاحب کا جواب آیا ’’مرض میں کوئی فرق نہیں پڑا لیکن گھر والوں کی خواہش ہے کہ پندرہ دن کی دوا مزید بھجوادیں۔

بذریعہ ڈاک دوا ارسال کر دی گئی۔ ایک ماہ گزرنے پر ڈاکٹر سبطین کاظمی پھر تشریف لائے۔ ان کے پاس سندھی زبان میں لکھا ایک لمبا چوڑا خط تھا جس میں تحریر تھا کہ اگرچہ افاقہ نہیں ہوا لیکن خون کے سفید ذرات کم بننے لگے ہیں۔ سرخ، ذرات میں جو کمی ہو رہی تھی‘ وہ بھی نہیں ہو رہی لہٰذا آپ ایک مہینہ کی دوا اور بھجوادیں۔ میں نے ڈاکٹر صاحب کو دوادے دی۔

ایک ماہ گزرنے پر ڈاکٹر صاحب پھر لاہور آئے‘مریضہ کی شفایابی کی خوش خبری سنائی اور کہا کہ ہسپتال سے اسے گھر لے آئے ہیں لیکن اہل خانہ کی خواہش ہے کہ ایک ماہ کی دوا احتیاطاً مزید دے دی جائے۔

ساتھ ہی ڈاکٹر صاحب کہنے لگے ’’جب مریضہ ہسپتال چھوڑ رہی تھی تو ڈاکٹروں نے کہا  مریضہ کو ہسپتال ہی میں رکھیں۔ اب وہ علاج کریں گے لیکن مریضہ کے والدین نے کہا ’بابا! جن کے علاج سے فائدہ ہوا ہے ہم تو انہی کا علاج جاری رکھیں گے۔‘‘

ایک ماہ مزید گزرنے پر ڈاکٹر صاحب تشریف لائے اور کہنے لگے’’ حکیم صاحب! مریضہ تو الحمد للہ ٹھیک ہوگئی ہے لیکن ہم ایک بات پر بہت حیران ہیں۔ بیماری سے پہلے مریضہ بانجھ تھی۔ اس کے کوئی اولاد نہیں ہوئی تھی لیکن اب اللہ کے فضل سے مریضہ امید سے ہے۔‘‘

میں ہنس پڑا اور کہا ’’ڈاکٹر صاحب! آپ کو معلوم ہے کہ میں نے مریضہ کو کیا دوادی تھی؟‘‘

کہنے لگے ’’چھوٹی چھوٹی گولیاں صبح شام لینی تھیں۔‘‘ ۔میں نے انہیں بتایا کہ یہ گولیاں حب اٹھہرا کہلاتی ہیں اور بنیادی طوری پر بانجھ پن کے لیے مفید ہیں لیکن اس میں اجزائے دوائیہ اتنے کم ہیں کہ بمشکل ایک چاول کی مقدار میں گولی بنتی ہے۔ اس کا وزن بڑھانے کے لیے اس میں ایک حصہ دوائی اجزاء اور آٹھ حصہ دھمانسہ ڈالا جاتا ہے جس سے چنے کے برابر گولی بن جاتی ہے۔ میرے پاس چونکہ دھمانسہ کی بنی ہوئی یہی دوا موجود تھی لہٰذا یہی دیتا رہا اور اس نے دونوں کام کردئیے۔ ڈاکٹر صاحب بہت خوش تھے۔ ظاہر ہے ان سے زیادہ لڑکی اور اس کے والدین خوش ہوں گے جوا اپنی بیٹی کی زندگی سے مایوس ہو چکے تھے مگر ایک کر شماتی جڑی بوٹی نے اسے حیات نو عطا کی۔

(حکیم عبد الوحید سلیمانی - اردو ڈائجسٹ اکتوبر ۲۰۰۳ء)

Last Updated : Dec 22, 2012